English اُردو        
  رابطہ اغراض و مقاصد تعارف سرورق

 

۱۱ مئی۲۰۱۲ء

پریس ریلیز

آج جب کہ ملک بھر میں فیض احمد فیض ، سعادت حسن منٹو کی ادبی اور ثقافتی سطح پر پذیرائی کر کے ہم یہ سمجھنے کی کوشش کررہے ہیں کہ وہ کون سی ایسی طاقتیں تھیں جنھوں نے پاکستان کے تخلیقی ضمیر کو اذیتیں پہنچائیں اور فیض، منٹو کے ساتھ ساتھ جالب، استاد دامن، گل خان نصیر ، شیخ ایاز اور اجمل خٹک کو عقوبت کا نشانہ بنایا۔ ایسے میں اجمل خٹک کے مزار پر حملہ کرنے والوں نے اپنا وہ بھیانک چہرہ عیاں کیا ہے جس پر سفاکی کے سوا کچھ نہیں اور ثابت کیا ہے کہ پاکستان، اسلام اور انسانیت سے ان کا کوئی واسطہ نہیں۔ ایسے میں سعادت حسن منٹو کے ورثا کی وہ احتیاط سمجھ میں آتی ہے کہ انھوں نے منٹو کی قبر پر وہ کتبہ آویزاں نہیں کیا جو منٹو نے اپنی زندگی میں لکھا تھا۔

(جاوید اخترملک)
مشیر ابلاغ عامہ

 
 
جملہ حقوق بحق ادارۂ فروغِ قومی زبان محفوظ ہیں